حصولِ منزلِ عشق   

حصولِ منزلِ عشق   

Hasool-e-Manzil-e-Ishq  by Shahid Saleem Butt

درپیش گر  امتحانِ عشق ہو ‘   سجدہ  عشق  تو پھر ضروری ہے۔  

اس بے خودی کی آگ    میں خود کو جلا نا بھی تو ضروری ہے۔

 

لاشعور ی پردوں کے سب تانے باترتیب کرکے۔

میرے تمام بانوں کی ان میں پیوستگی بھی تو ضروری ہے۔

 

سب کچھ  لٹا کر بھی یہاں سرخروئی  کا کوئی دعویٰ نہیں۔

ہاں  اپنی طرف سے اِک ایسی بےلوث نذر  بھی تو ضروری ہے۔

 

سب قوتیں جو مِل بھی جائیں ، عشق سے بڑھ سکتیں نہیں۔

سب طاقتوں کو  جلو    ہ  تہِ تیغ لانا بھی تو ضروری ہے۔

 

دلِ بیدار   سے سب پردے   چاک تو کرنے  ہونگے ۔

حصولِ منزلِ عشق کو   ، روح  کی بیداری  بھی    تو ضروری ہے۔

#SHAHID SALEEM BUTT

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Next Post

قرنطینہ میں تنہا تنہا

Thu Apr 23 , 2020
(قرنطینہ میں تنہا تنہا) غزل دکھ سکھ سب کا تنہا تنہا ہنسنا رونا ، تنہا تنہا آہٹ ہے نہ سایہ […]

Urdu Zindgy.com Site

Zindgy.com urdu

Write for Zindgy

Write for Zindgy Write for Zindgy or Blog (English or Urdu) Send your write-up file at websfocus@gmail.com Terms and Conditions

Number #1 Baby Names Database in the World

%d bloggers like this: